Daily Roshni News

شعرو ادب

قطعہ۔  ( قربانی )۔۔۔قربانی کا حق اگر کرنا ہے ۔۔۔ادا۔۔۔شاعر ۔۔۔ناصر نظامی

قطعہ۔  ( قربانی ) قربانی کا حق اگر کرنا ہے ۔۔۔ادا شاعر ۔۔۔ناصر نظامی خدا کے، قرب کا نام ہے، قربانی پاک، ہوتا ہے ہمیشہ بہتا۔۔ پانی قربانی کا حق، اگر کرنا ہے۔۔ادا ذبح کرو، اپنی خواشات۔۔ نفسانی ناصر نظامی

Loading

گیت۔۔۔اداؤں میں ۔۔۔ چاہت کا،  خمار۔۔۔شاعر۔۔۔ناصر نظامی

گیت اداؤں میں ۔۔۔ چاہت کا،  خمار شاعر۔۔۔ناصر نظامی چہرہ نورانی کرنوں سے، چمکے جبیں، پر سنہری افشاں، دمکے سمٹا سمٹا سا، لچکیلا،۔۔۔ بدن آنکھوں میں معصوم، شرمیلا پن انگ انگ سے، تبسم۔۔۔ چھنکے گلابی گلابی سے۔ ۔۔ ۔سے، رخسار اداؤں میں ۔۔۔ چاہت کا،  خمار لہجے میں خلوص کی چاندی،۔۔ کھنکے ناصر نظامی

Loading

ظلمت کی خیر ہو۔۔۔شاعر۔۔۔شہزاد تابش

ظلمت کی خیر ہو شاعر۔۔۔شہزاد تابش اس  دور  پر  فریب  میں  الفت کے  نام   پر قلب و نظر سے جھانکتی نفرت  کی خیر  ہو سعئ   بقائے   ارتقا   ہمت    کی   خیر    ہو ہر   منکر   رب  القضا  جرأت  کی  خیر   ہو نکلے ہیں سب  ہی مسلکی  پرچم  لیے  ہوئے تدوین  دین  مصطفیٰ  حرمت  کی  خیر  ہو شیشہ  …

ظلمت کی خیر ہو۔۔۔شاعر۔۔۔شہزاد تابش Read More »

Loading

یاد گارقطعہ۔۔۔شاعر۔۔۔ناصر نظامی

یاد گارقطعہ شاعر۔۔۔ناصر نظامی لوگوں کے نہ لباس دیکھو، نہ لوگوں کے، لبادے دیکھو ان کو پرکھنا ہے تو، ان کے مصمم، ارادے دیکھو کسی کی خوش الفاظی کا نہ کرو کبھی، اعتبار کسی نے اب تک، کتنے نبھائے ہیں اپنے، وعدے دیکھو ناصر نظامی

Loading

نظم۔۔۔لٹریسی سکولوں کے ٹیچرز ۔۔۔شاعر۔۔۔ناصر نظامی

نظم لٹریسی سکولوں کے ٹیچرز  شاعر۔۔۔ناصر نظامی پنجاب کی وزیر اعلی، ذی رتبہ، ذی وقار لٹریسی سکولوں کے ٹیچروں کی سنو، پکار ایک مزدور تو لیتا ہے، تیس ہزار، تنخواہ ستم ظریفی اور استحصال کی دیکھو، انتہا ان ٹیچروں کو ملتے ہیں، ساڑھے بارہ ہزار اساتذہ اکرام ہوتے ہیں قوم کا، چہرہ ملک و قوم …

نظم۔۔۔لٹریسی سکولوں کے ٹیچرز ۔۔۔شاعر۔۔۔ناصر نظامی Read More »

Loading

قطعہ۔۔کوئی دیوار مہر بانی بناؤ۔۔شاعر۔۔۔ناصر نطامی

قطعہ کوئی دیوار مہر بانی بناؤ شاعر۔۔۔ناصر نطامی کوئی دیوار مہر بانی بناؤ کسی کے لئے کوئی آ سانی بناؤ انسان ہونے کا رکھو کچھ بھرم انسانیت کی کوئی نشانی بناؤ ناصر نظامی

Loading

غزل۔۔۔شاعر۔۔۔ناصر نظامی

غزل شاعر۔۔۔ناصر نظامی نہ جاؤ شہر میں شیشے کا پہن کے لباس یہ شہر ا ئینہ برداروں کو نہیں ہے راس آ دمی تو ہیں سبھی انسان اسے کہتے ہیں اوروں کے درد کا ہو جس کے سینے میں احساس بجھے چراغ پہ منڈلاتے  ہیں۔ پروانے تتلیاں آ تی نہیں سوکھے ہوئے پھولوں کے پاس …

غزل۔۔۔شاعر۔۔۔ناصر نظامی Read More »

Loading

یادگار گیت۔۔۔شاعر۔۔۔ناصر نظامی

یادگار گیت شاعر۔۔۔ناصر نظامی پیار، تتلیوں کے، پروں جیسا ہوتا ہے پیار، جگنوؤں کے، گھروں جیسا ہوتا ہے پیار پھول کبھی۔۔۔۔۔ کانچ پیار شبنمی ہے۔۔۔۔۔۔آنچ پیار روشنی کی، کرنوں جیسا ہوتا ہے پیار چھاؤں کبھی۔۔۔۔ دھوپ بڑے پیار کے ہیں۔۔۔  روپ پیار بادلوں کے، رنگوں جیسا ہوتا ہے پیار پتھروں کو۔۔۔۔۔ پگھلائے دیئے پانی میں۔۔۔۔۔۔  …

یادگار گیت۔۔۔شاعر۔۔۔ناصر نظامی Read More »

Loading

غزل۔۔۔شاعر۔۔۔ناصر نظامی

غزل شاعر۔۔۔ناصر نظامی میں شہر سے لے کے، ڈر، آ گیا ہوں کم ظرف تھے، معتبر،۔۔۔آ گیا ہوں بچا کے میں اپنا، سر، آ گیا۔۔ ہوں بھر کے دامن میں، پتھر، آ گیا ہوں دریا کے لب تھے سوکھے میری طرح آنکھوں میں ریت، بھر کر، آ گیا ہوں سبیل پر تصویر نہ ۔۔۔۔ بنوائی …

غزل۔۔۔شاعر۔۔۔ناصر نظامی Read More »

Loading

غزل۔۔شاعر۔۔۔ناصر نظامی

غزل شاعر۔۔۔ناصر نظامی جب کبھی ان کو ہے ، برہم دیکھا اپنا رکتا ہوا ہے۔۔۔ ۔ دم دیکھا ہم نے دیکھے، جفاؤں کے۔ پتلے آپ جیسا نہ۔۔۔۔۔ محترم دیکھا ہم نے موسم بدلتا ۔۔ دیکھا ہے آدمی سے مگر ہے۔۔۔۔ کم دیکھا سامنے بیٹھا رہا۔۔۔ بت بن کے ہم نے یہ بھی تیرا۔۔ کرم  دیکھا …

غزل۔۔شاعر۔۔۔ناصر نظامی Read More »

Loading